Feeds:
Posts
Comments

Archive for December, 2009

BLACK or WHITE?

ZARDARIS LOCAL ASSETS ARE
Plot no. 121, Phase VIII, DHA Karachi.
Agricultural land situated in Deh Dali Wadi, Taluka, Tando Allah Yar.
Agricultural property located in Deh Tahooki Taluka, District Hyderabad measuring 65.15 acres.
Agricultural land falling in Deh 76-Nusrat, Taluka, District Nawabshah measuring 827.14 acres
Agricultural land situated in Deh 76-Nusrat, Taluka, District Nawabshah measuring 293.18 acres
Residential plot No 3 (Now House) Block No B-I, City Survey No 2268 Ward-A Nawabshah
Huma Heights (Asif Apartments) 133, Depot Lines, Commissariat Road, Karachi
Trade Tower Building 3/CL/V Abdullah Haroon Road, Karachi
House No 8, St 9, F-8/2, Islamabad
Agricultural land in Deh 42 Dad Taluka/ District Nawabshah
Agricultural land in Deh 51 Dad Taluka Distt Nawabshah
Plot No 3 & 4 Sikni (residential) Near Housing Society Ltd. Nawabshah
CafT Sheraz (C.S No.. 2231/2 & 2231/3) Nawabshah
Agricultural land in Deh 23-Deh Taluka & District Nawabshah
Agricultural property in Deh 72-A, Nusrat Taluka, Nawabshah
Agricultural land in Deh 76-Nusrat Taluka, Nawabshah
Plot No. A/136 Survey No 2346 Ward A Government Employees Cooperative Housing Society Ltd, Nawabshah
Agricultural land in Deh Jaryoon Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Aroro Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Nondani Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Lotko Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Jhol Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Kandari Taluka Tando Allah Yar, Distt. Hyderabad
Agricultural land in Deh Deghi Taluka Tando Mohammad Khan
Agricultural land in Deh Rahooki Taluka, Hyderabad
Property in Deh Charo Taluka, Badin
Agricultural property in Deh Dali Wadi Taluka, Hyderabad
Five acres prime land allotted by DG KDA in 1995/96
4,000 kanals on Simli Dam
80 acres of land at Hawkes Bay
13 acres of land at Maj Gulradi (KPT Land)
One acre plot, GCI, Clifton
One acre of land, State Life (International Center, Sadar)
FEBCs worth Rs. 4 million


SHARES IN SUGAR MILLS INCLUDE

Sakrand Sugar Mills Nawabshah
Ansari Sugar
Mills Hyderabad
Mirza Sugar Mills Badin
Pangrio Sugar Mills Thatta
Bachani Sugar Mills Sanghar


FRONT COMPANIES IN FOREIGN COUNTRIES

Bomer Fiannce Inc, British Virgin Islands
Mariston Securities Inc, British Virgin Islands
Marleton Business S A, British Virgin Islands
Capricorn Trading S A, British Virgin Islands
Fagarita Consulting INc, British Virgin Islands
Marvil Associated Inc, British Virgin Islands
Pawnbury Finance Ltd, British Virgin Islands
Oxton Trading Limited, British Virgin Islands
Brinslen Invest S A, British Virgin Islands
Chimitex Holding S A, British Virgin Islands
Elkins Holding S A, British Virgin Islands
Minister Invest Ltd, British Virgin Islands
Silvernut Investment Inc, British Virgin Islands
Tacolen Investment Ltd, British Virgin Islands
Marlcrdon Invest S A, British Virgin Islands
Dustan Trading Inc, British Virgin Islands
Reconstruction and Development Finance Inc, British Virgin Islands
Nassam Alexander Inc.
Westminster Securities Inc.
Laptworth Investment Inc 202, Saint Martin Drive, West Jacksonville
Intra Foods Inc. 3376, Lomrel Grove, Jacksonville, Florida
Dynatel Trading Co, Florida
A..S Realty Inc. Palm Beach Gardens Florida
Bon Voyage Travel Consultancy Inc, Florida


ZARDARIS PROPERTIES IN UK ARE

355 acre Rockwood Estate, Surrey (Now stands admitted)
Flat 6, 11 Queensgate Terrace, London SW7
26 Palace Mansions, Hammersmith Road, London W14
27 Pont Street, London, SW1
20 Wilton Crescent, London SW1
23 Lord Chancellor Walk, Coombe Hill, Kingston, Surrey
The Mansion, Warren Lane, West Hampstead, London
A flat at Queensgate Terrace, London
Houses at Hammersmith Road, Wilton Crescent, Kingston and in Hampstead.


ZARDARIS PROPERTIES IN BELGIUM

12-3 Boulevard De-Nieuport, 1000, Brussels, (Building containing 4 shops and 2 large apartments)
Chausee De-Mons, 1670, Brussels


ZARDARIS PROPERTIES IN FRANCE ARE

La Manoir De La Reine Blanche and property in Cannes
ZARDARIS PROPERTIES IN USA — in the name of Asif Zardari and managed by Shimmy Qureshi are:
Stud farm in Texas
Wellington Club East, West Palm Beach
12165 West Forest Hills, Florida
Escue Farm 13,524 India Mound, West Palm Beach
3,220 Santa Barbara Drive, Wellington Florida
13,254 Polo Club Road, West Palm Beach Florida
3,000 North Ocean Drive, Singer Islands, Florida
525 South Flager Driver, West Palm Beach, Florida
Holiday Inn Houston Owned by Asif Ali Zardari, Iqbal Memon and Sadar-ud-Din Hashwani


ZARDARIS BANK ACCOUNTS IN FOREGN COMPANIES ARE

Union Bank of Switzerland (Account No. 552.343, 257.556.60Q, 433.142.60V, 216.393.60T)
Citibank Private Limited (SWZ) (Account No. 342034)
Citibank N A Dubai (Account No. 818097)
Barclays Bank (Suisse) (Account No. 62290209)
Barclays Bank (Suisse) (Account No. 62274400)
Banque Centrade Ormard Burrus S A
Banque Pache S A
Banque Pictet & Cie
Banque La Henin, Paris (Account No. 00101953552)
Bank Natinede Paris in Geneva (Account NO.. 563.726.9)
Swiss Bank Corporation
Chase Manhattan Bank Switzerland
American Express Bank Switzerland
Societe De Banque Swissee
Barclays Bank (Knightsbridge Branch) (Account No. 90991473)
Barclays Bank, Kingston and Chelsea Branch, (Sort Code 20-47-34135)
National Westminster Bank, Alwych Branch (Account No. 9683230)
Habib Bank (Pall Mall Branch).
National Westminster Bank, Barking Branch, (Account No. 28558999).
Habib Bank AG, Moorgate, London EC2
National Westminster Bank, Edgware Road, London
Banque Financiei E Dela Citee, Credit Suisse
Habib Bank AG Zurich, Switzerland
Pictet Et Cie, Geneva
Credit Agricole, Paris
Credit Agridolf, Branch 11, Place Brevier, 76440, Forges Les Faux
Credit Agricole, Branch Haute � Normandie, 76230, Boise Chillaum

BLACK or WHITE Money?

Read Full Post »


ماں ہمیشہ سچ نہیں بولتی۔۔۔




آٹھ بار میری ماں نے مجھ سے جھوٹ بولا۔۔۔


1. یہ کہانی میری پیدائش سے شروع ہوتی ہے۔۔میں ایک بہت غریب فیملی کا اکلوتا بیٹا تھا۔۔ہمارے پاس کھانے کو کچھ بھی نہ تھا۔۔۔اور اگر کبھی ہمیں کھانے کو کچھ مل جاتا تو امی اپنے حصے کا کھانا بھی مجھے دے دیتیں اور کہتیں۔۔تم کھا لو مجھے بھوک نہیں ہے۔۔۔یہ میری ماں کا پہلا جھوٹ تھا۔

2. جب میں تھوڑا بڑا ہوا تو ماں گھر کا کام ختم کر کے قریبی جھیل پر مچھلیاں پکڑنے جاتی اور ایک دن اللہ کے کرم سے دو مچھلیاں پکڑ لیں تو انھیں جلدی جلدی پکایا اور میرے سامنے رکھ دیا۔میں کھاتا جاتا اور جو کانٹے کے ساتھ تھوڑا لگا رہ جاتا اسے وہ کھاتی۔۔۔یہ دیکھ کر مجھے بہت دکھ ہوا ۔۔میں نے دوسری مچھلی ماں کے سامنے رکھ دی ۔۔اس نے واپس کر دی اور کہا ۔۔بیٹا تم کھالو۔۔تمھیں پتہ ہے نا مچھلی مجھے پسند نہیں ہے۔۔۔یہ میری ماں کا دوسرا جھوٹ تھا۔

3. جب میں سکول جانے کی عمر کا ہوا تو میری ماں نے ایک گارمنٹس کی فیکٹری کے ساتھ کام کرنا شروع کیا۔۔اور گھر گھر جا کر گارمنٹس بیچتی۔۔۔سردی کی ایک رات جب بارش بھی زوروں پر تھی۔۔میں ماں کا انتظار کر رہا تھا جو ابھی تک نہیں آئی تھی۔۔میں انھیں ڈھونڈنے کے لیے آس پاس کی گلیوں میں نکل گیا۔۔دیکھا تو وہ لوگوںکے دروازوں میں کھڑی سامان بیچ رہی تھی۔۔۔میں نے کہا ماں! اب بس بھی کرو ۔۔تھک گئی ہوگی ۔۔سردی بھی بہت ہے۔۔ٹائم بھی بہت ہو گیا ہے ۔۔باقی کل کر لینا۔۔تو ماں بولی۔۔بیٹا! میں بالکل نہیں تھکی۔۔۔یہ میری ماں کا تیسرا جھوٹ تھا

4. ایک روز میرا فائنل ایگزام تھا۔۔اس نے ضد کی کہ وہ بھی میرے ساتھ چلے گی ۔۔میں اندر پیپر دے رہا تھا اور وہ باہر دھوپ کی تپش میں کھڑی میرے لیے دعا کر رہی تھی۔۔میں باہر آیا تو اس نے مجھے اپنی آغوش میں لے لیا اور مجھے ٹھنڈا جوس دیا جو اس نے میرے لیے خریدا تھا۔۔۔میں نے جوس کا ایک گھونٹ لیا اور ماں کے پسینے سے شرابور چہرے کی طرف دیکھا۔۔میں نے جوس ان کی طرف بڑھا دیا تو وہ بولی۔۔نہیں بیٹا تم پیو۔۔۔مجھے پیاس نہیں ہے۔۔یہ میری ماں کا چوتھا جھوٹ تھا۔

5. میرے باپ کی موت ہوگئی تو میری ماں کو اکیلے ہی زندگی گزارنی پڑی۔۔زندگی اور مشکل ہوگئی۔۔اکیلے گھر کا خرچ چلانا تھا۔۔نوبت فاقوں تک آگئی۔۔میرا چچا ایک اچھا انسان تھا ۔۔وہ ہمارے لیے کچھ نہ کچھ بھیج دیتا۔۔جب ہمارے پڑوسیوں نے ہماری ی حالت دیکھی تو میری ماں کو دوسری شادی کا مشورہ دیا کہ تم ابھی جوان ہو۔۔مگر میری ماں نے کہا نہیںمجھے سہارے کی ضرورت نہیں ۔۔۔یہ میری ماں کا پانچواں جھوٹ تھا۔

6. جب میں نے گریجویشن مکمل کر لیا تو مجھے ایک اچھی جاب مل گئی ۔۔میں نے سوچا اب ماں کو آرام کرنا چاہیے اور گھر کا خرچ مجھے اٹھانا چاہیے۔۔وہ بہت بوڑھی ہو گئی ہے۔۔میں نے انھیں کام سے منع کیااور اپنی تنخواہ میں سے ان کے لیے کچھ رقم مختص کر دی تو اس نے لینے سے انکار کر دیا اور کہا کہ ۔۔تم رکھ لو۔۔۔میرے پاس ہیں۔۔۔مجھے پیسوں کی ضرورت نہیں ہے۔۔یہ اس کا چھٹا جھوٹ تھا۔

7. میں نے جاب کے ساتھ اپنی پڑھائی بھی مکمل کر لی تو میری تنخواہ بھی بڑھ گئی اور مجھے جرمنی میں کام کی آفر ہوئی۔۔میں وہاں چلا گیا۔۔۔۔ سیٹل ہونے کے بعد انھیں اپنے پاس بلانے کے لیے فون کیا تو اس نے میری تنگی کے خیال سے منع کر دیا۔۔اور کہا کہ مجھے باہر رہنے کی عادت نہیں ہے۔۔میں نہیں رہ پاوں گی۔۔۔یہ میری ماں کا ساتواںجھوٹ تھا۔

8. میری ماں بہت بوڑھی ہو گئی۔۔انھیں کینسر ہو گیا۔۔انھیں دیکھ بھال کے لیے کسی کی ضرورت تھی۔۔میں سب کچھ چھوڑ چھاڑ کر ان کے پاس پہنچ گیا۔۔وہ بستر پر لیٹی ہوئی تھیں۔۔مجھے دیکھ کر مسکرانے کی کوشش کی۔۔۔میرا دل ان کی حالت پر خون کے آنسو رو رہا تھا۔۔۔وہ بہت لاغر ہو گئی تھیں۔۔میری آنکھوں سے آنسو نکل آئے۔۔تو وہ کہنے لگیں ۔۔مت رو بیٹا۔۔۔ میں ٹھیک ہوں ۔۔مجھے کوئی تکلیف نہیں ہو رہی۔۔۔یہ میری ماں کا آٹھواںجھوٹ تھا۔۔۔اور پھر میری ماں نے ہمیشہ کے لیے آنکھیں بند کر لیں ۔


جن کے پاس ماں ہے۔۔۔اس عظیم نعمت کی حفاطت کریںاس سے پہلے کہ یہ نعمت تم سے بچھڑ جائے۔
اور جن کے پاس نہیں ہے۔۔ہمیشہ یاد رکھنا کہ انھوں نے تمھارے لیے کیا کچھ کیا۔۔اور ان کی مغفرت کے لیے دعا کرتے رہنا

ماں ہمیشہ سچ نہیں بولتی۔۔۔




آٹھ بار میری ماں نے مجھ سے جھوٹ بولا۔۔۔




٭ یہ کہانی میری پیدائش سے شروع ہوتی ہے۔۔میں ایک بہت غریب فیملی کا اکلوتا بیٹا تھا۔۔ہمارے پاس کھانے کو کچھ بھی نہ تھا۔۔۔اور اگر کبھی ہمیں کھانے کو کچھ مل جاتا تو امی اپنے حصے کا کھانا بھی مجھے دے دیتیں اور کہتیں۔۔تم کھا لو مجھے بھوک نہیں ہے۔۔۔یہ میری ماں کا پہلا جھوٹ تھا۔
٭ جب میں تھوڑا بڑا ہوا تو ماں گھر کا کام ختم کر کے قریبی جھیل پر مچھلیاں پکڑنے جاتی اور ایک دن اللہ کے کرم سے دو مچھلیاں پکڑ لیں تو انھیں جلدی جلدی پکایا اور میرے سامنے رکھ دیا۔میں کھاتا جاتا اور جو کانٹے کے ساتھ تھوڑا لگا رہ جاتا اسے وہ کھاتی۔۔۔یہ دیکھ کر مجھے بہت دکھ ہوا ۔۔میں نے دوسری مچھلی ماں کے سامنے رکھ دی ۔۔اس نے واپس کر دی اور کہا ۔۔بیٹا تم کھالو۔۔تمھیں پتہ ہے نا مچھلی مجھے پسند نہیں ہے۔۔۔یہ میری ماں کا دوسرا جھوٹ تھا۔
٭جب میں سکول جانے کی عمر کا ہوا تو میری ماں نے ایک گارمنٹس کی فیکٹری کے ساتھ کام کرنا شروع کیا۔۔اور گھر گھر جا کر گارمنٹس بیچتی۔۔۔سردی کی ایک رات جب بارش بھی زوروں پر تھی۔۔میں ماں کا انتظار کر رہا تھا جو ابھی تک نہیں آئی تھی۔۔میں انھیں ڈھونڈنے کے لیے آس پاس کی گلیوں میں نکل گیا۔۔دیکھا تو وہ لوگوںکے دروازوں میں کھڑی سامان بیچ رہی تھی۔۔۔میں نے کہا ماں! اب بس بھی کرو ۔۔تھک گئی ہوگی ۔۔سردی بھی بہت ہے۔۔ٹائم بھی بہت ہو گیا ہے ۔۔باقی کل کر لینا۔۔تو ماں بولی۔۔بیٹا! میں بالکل نہیں تھکی۔۔۔یہ میری ماں کا تیسرا جھوٹ تھا
٭ایک روز میرا فائنل ایگزام تھا۔۔اس نے ضد کی کہ وہ بھی میرے ساتھ چلے گی ۔۔میں اندر پیپر دے رہا تھا اور وہ باہر دھوپ کی تپش میں کھڑی میرے لیے دعا کر رہی تھی۔۔میں باہر آیا تو اس نے مجھے اپنی آغوش میں لے لیا اور مجھے ٹھنڈا جوس دیا جو اس نے میرے لیے خریدا تھا۔۔۔میں نے جوس کا ایک گھونٹ لیا اور ماں کے پسینے سے شرابور چہرے کی طرف دیکھا۔۔میں نے جوس ان کی طرف بڑھا دیا تو وہ بولی۔۔نہیں بیٹا تم پیو۔۔۔مجھے پیاس نہیں ہے۔۔یہ میری ماں کا چوتھا جھوٹ تھا۔
٭ میرے باپ کی موت ہوگئی تو میری ماں کو اکیلے ہی زندگی گزارنی پڑی۔۔زندگی اور مشکل ہوگئی۔۔اکیلے گھر کا خرچ چلانا تھا۔۔نوبت فاقوں تک آگئی۔۔میرا چچا ایک اچھا انسان تھا ۔۔وہ ہمارے لیے کچھ نہ کچھ بھیج دیتا۔۔جب ہمارے پڑوسیوں نے ہماری ی حالت دیکھی تو میری ماں کو دوسری شادی کا مشورہ دیا کہ تم ابھی جوان ہو۔۔مگر میری ماں نے کہا نہیںمجھے سہارے کی ضرورت نہیں ۔۔۔یہ میری ماں کا پانچواں جھوٹ تھا۔
٭جب میں نے گریجویشن مکمل کر لیا تو مجھے ایک اچھی جاب مل گئی ۔۔میں نے سوچا اب ماں کو آرام کرنا چاہیے اور گھر کا خرچ مجھے اٹھانا چاہیے۔۔وہ بہت بوڑھی ہو گئی ہے۔۔میں نے انھیں کام سے منع کیااور اپنی تنخواہ میں سے ان کے لیے کچھ رقم مختص کر دی تو اس نے لینے سے انکار کر دیا اور کہا کہ ۔۔تم رکھ لو۔۔۔میرے پاس ہیں۔۔۔مجھے پیسوں کی ضرورت نہیں ہے۔۔یہ اس کا چھٹا جھوٹ تھا۔
٭میں نے جاب کے ساتھ اپنی پڑھائی بھی مکمل کر لی تو میری تنخواہ بھی بڑھ گئی اور مجھے جرمنی میں کام کی آفر ہوئی۔۔میں وہاں چلا گیا۔۔۔۔ سیٹل ہونے کے بعد انھیں اپنے پاس بلانے کے لیے فون کیا تو اس نے میری تنگی کے خیال سے منع کر دیا۔۔اور کہا کہ مجھے باہر رہنے کی عادت نہیں ہے۔۔میں نہیں رہ پاوں گی۔۔۔یہ میری ماں کا ساتواںجھوٹ تھا۔
٭میری ماں بہت بوڑھی ہو گئی۔۔انھیں کینسر ہو گیا۔۔انھیں دیکھ بھال کے لیے کسی کی ضرورت تھی۔۔میں سب کچھ چھوڑ چھاڑ کر ان کے پاس پہنچ گیا۔۔وہ بستر پر لیٹی ہوئی تھیں۔۔مجھے دیکھ کر مسکرانے کی کوشش کی۔۔۔میرا دل ان کی حالت پر خون کے آنسو رو رہا تھا۔۔۔وہ بہت لاغر ہو گئی تھیں۔۔میری آنکھوں سے آنسو نکل آئے۔۔تو وہ کہنے لگیں ۔۔مت رو بیٹا۔۔۔ میں ٹھیک ہوں ۔۔مجھے کوئی تکلیف نہیں ہو رہی۔۔۔یہ میری ماں کا آٹھواںجھوٹ تھا۔۔۔اور پھر میری ماں نے ہمیشہ کے لیے آنکھیں بند کر لیں ۔


جن کے پاس ماں ہے۔۔۔اس عظیم نعمت کی حفاطت کریںاس سے پہلے کہ یہ نعمت تم سے بچھڑ جائے۔
اور جن کے پاس نہیں ہے۔۔ہمیشہ یاد رکھنا کہ انھوں نے تمھارے لیے کیا کچھ کیا۔۔اور ان کی مغفرت کے لیے دعا کرتے رہنا

Read Full Post »

9 principles for Peace of Mind..

1. Do Not Interfere In Others’ Business Unless Asked

Most of us create our own problems by interfering too often in others’ affairs. We do so because somehow we have convinced ourselves that our way is the best way, our logic is the perfect logic and those who do not conform to our thinking must be criticized and steered to the right  direction, our direction. This thinking denies the existence of individuality and consequently the existence of God.. God has created each one of us in a unique way. No two human beings can think or act in exactly the same way. All men or women act the way they do because God within them prompts them that way. Mind your own business and you will keep your peace.


2. Forgive And Forget

This is the most powerful aid to peace of mind. We often develop ill feelings inside our heart for the person who insults us or harms us. We nurture grievances. This in turn results in loss of sleep, development of stomach ulcers, and high blood pressure. This insult or injury was done once, but nourishing of grievance goes on forever by constantly remembering it. Get over this bad habit. Life is too short to waste in such trifles. Forgive, Forget, and march on. Love flourishes in giving and forgiving.


3. Do Not Crave For Recognition

This world is full of selfish people. They seldom praise anybody without selfish motives. They may praise you today because you are in power, but no sooner than you are powerless, they will forget your achievement and will start finding faults in you. Why do you wish to kill yours lf in striving for their recognition? Their recognition is not worth the aggravation. Do your duties ethically and sincerely.

4. Do Not Be Jealous

We all have experienced how jealousy can disturb our peace of mind. You know that you work harder than your colleagues in the office, but sometimes they get promotions; you do not. You started a business several years ago, but you are not as successful as your neighbor whose business is only one year old. There are several examples like these in everyday life. Should you be jealous? No. Remember everybody’s life is shaped by his/her destiny, which has now become his/her reality. If you are destined to be rich, nothing in the world can stop you. If you are not so destined, no one can help you either. Nothing will be gained by blaming others for your misfortune. Jealousy will not get you anywhere; it will only take away your peace of mind.

5. Change Yourself According To The Environment

If you try to change the environment single-handedly, the chances are you will fail. Instead, change yourself to suit your environment. As you do this, even the environment, which has been unfriendly to you, will mysteriously change and seem congenial and harmonious.

6. Endure What Cannot Be Cured

This is the best way to turn a disadvantage into an advantage. Every day we face numerous inconveniences, ailments, irritations, and accidents that are beyond our control… If we cannot control them or change them, we must learn to put up with these things. We must learn to endure them cheerfully. Believe in yourself and you will gain in terms of patience, inner strength and will power.

7. Do Not Bite Off More Than You Can Chew

This maxim needs to be remembered constantly. We often tend to take more responsibilities than we are capable of carrying out. This is done to satisfy our ego. Know your limitations. . Why take on additional loads that may create more worries? You cannot gain peace of mind by expanding your external activities. Reduce your material engagements and spend time in prayer, introspection and meditation. This will reduce those thoughts in your mind that make you restless. Uncluttered mind will produce greater peace of mind.

8. Never Leave The Mind Vacant

An empty mind is the devil’s workshop. All evil actions start in the vacant mind. Keep your mind occupied in something positive, something worthwhile . Actively follow a hobby. Do something that holds your interest. You must decide what you value more: money or peace of mind. Your hobby, like social work or religious work, may not always earn you more money, but you will have a sense of fulfillment and achievement. Even when you are resting physically, occupy yourself in healthy reading or mental chanting of God’s name.

9. Do Not Procrastinate And Never Regret

Do not waste time in protracted wondering ” Should I or shouldn’t I?” Days, weeks, months, and years may be wasted in that futile mental debating. You can never plan enough because you can never anticipate all future happenings. Value your time and do the things that need to be done. It does not matter if you fail the first time. You can learn from your mistakes and succeed the next time. Sitting back and worrying will lead to nothing. Learn from your mistakes, but do not brood over the past. DO NOT REGRET. Whatever happened was destined to happen only that way. Why cry over spilt milk?


Read Full Post »